‎حضرت نوح علیہ السلام کا عجیب واقعہ۔ ,ایک بوڑھیا اور حضرت نوح علیہ السلام،‎

ایک بوڑھیا اور حضرت نوح علیہ السلام کا عجیب واقعہ

جب حضرت نوح کشتی بنا رہے تھے تو ایک مومنہ بوڑھی عورت روز اللہ کے نبی کے پاس اپنی گٹھڑی لے کر آئی اور کہتی ” اے اللہ کے نبی ، کب کشتی روانہ ہو گی ؟ ،، حضرت نوح فرماتے ” ابھی دیر ہے ۔ وہ عورت شام تک بیٹھی رہتی اور پھر اٹھ کر چلی جاتی ۔ ایک دن حضرت نوح نے فرمایا کہ اے عورت جب جانا ہوا تو تمہیں بتا دیا جائے گا ۔ یہ عورت واپس چلی گئی اور انتظار کرنے لگی کہ کب نوح بلائیں گے ۔ 

اس دوران عذاب آگیا اور کشتی روانہ ہو گئی لیکن حضرت نوح علیہ السلام نے اس عورت کو نہ بلایا ظاہری طور پر نوح کو اس کو بلانا بھلا دیا گیا ) ۔

 جب طوفان تھما تو ایک دن حضرت نوح کے دل میں محبت جگی  کہ شہر کو دیکھوں جہاں سے چلا تھا ۔ وہاں آئے اور قریب جا کر دیکھا تو ایک جھونپڑی میں دیا جل رہا تھا ۔ حضرت نوح ع یہ دیکھ کر چونک گئے کہ روئے زمین پر کوئی ایسا گھر بھی ہے کہ اتنے عظیم طوفان کے بعد بھی جس میں چراغ جل رہا ہے 

انہوں نے وہاں تکبیر بلند کی تو وہ عورت سامان لے کر آگئی اور کہنے لگی ’ ’ یا نبی اللد ، کیا کشتی تیار ہے چلیں ؟ ) 

 حضرت نوح نے حیرت سے اسکو دیکھا اور کہا ” رکو بوڑھیا ۔ کیا تمہیں کچھ بھی پتا نہیں چلا ۔ وہ کہنے لگی یا نبی اللہ ، کیا نہیں پتا چلا۔؟؟

1 تبصرے

  1. یہ بڑھیا والا جو واقعہ ہے اس کا کسی کتاب سے حوالہ مل جاتا تو بہت مہربانی تھی

    جواب دیںحذف کریں

ایک تبصرہ شائع کریں

جدید تر اس سے پرانی